Wednesday, 3 August 2011

ٹوٹا ہوا افق



 میانوالی بھی اپنی رُت بدلتا ہے مگر
مرے دل کی زمینوں پر
 وہی موسم خزاں کا
وہی بے شکل چہرہ آسماں کا
وہی بے آب دریا داستاں کا
وہی بے روح منظر ہیں
وہی بے رنگ تصویریں
وہی چشمے۔۔وہی ابلا ہوا پانی
درختوں سے
مسلسل بھاپ بن کر اٹھ رہاہے
پگھلتی جارہی ہیں میری راتیں
سوا نیزے پہ سورج ہے مگر شب کی سیاہی اڑ رہی ہے میری مٹی میں
مرے اندر کی فصلیں تیرگی کی دھوپ میں مرجھا گئی ہیں
مجھے کوئی شکستِ ذات کی علت بتادے

No comments:

Post a Comment