Wednesday, 3 August 2011

بہاروں سے بھرا پیشہ

بہاروں سے بھرے گھر میں پچاسی سال کا بوڑھا

پچاسی سبز موسم انگلیوں پہ گن کے بولا،ایک لڑکے سے
صدی سے کم نہیں میرایہاں پر بیٹھنابیٹے
تجھے چوپال کیوں اچھی نہیں لگتی
مری جاگیر ورثہ ہے مرے اجداد کا بیٹے
مرے دادا کے اور والد کے کھیتوں میں مسلسل چلتے رہنے سے زمیں پر فصل اگتی تھی
یقیناچاپ سن کر میری نسلوں کی
یہ مٹی اور بھی زرخیز ہوگی
مگر بیٹے کہو بیٹے کہو نم
یہ پیشہ چھوڑنا کیوں چاہتے ہو
وراثت ہے تمہاری
تمہارے باپ دادا۔۔ہل چلاتے تھے
سوتم بھی ہل چلانے کیلئے پیدا ہوئے ہو
یہ محنت کوئی طعنہ تو نہیں ہے۔۔کبوتر ہو۔۔
یہی پرواز بہتر ہے
کبوتر کیلئے اچھا نہیں شہباز کا پیشہ
یہ ساری گفتگو سن کر کہا،دھقان کے پُر عزم بیٹے نے 
’’تمہاری نسل کے گھر میں رکے ہیں سبز موسم
مرے گھر میں کئی نسلوں سے ویرانی خزاں کی


مجھے تو سوچنا ہے
بہاروں سے بھرے گھر
جیسے تم لوگوں کے ہیں بابا
یہ کیسے ہاتھ آتے ہیں
مجھے معلوم کرنا ہے بہاروں سے بھرا پیشہ
مجھے معلوم کرنا ہے بہاروں سے بھرا پیشہ

2 comments:

  1. واہ۔۔۔۔۔۔۔۔واہ۔۔۔۔بہت اعلیٰ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یاسمین حبیب

    ReplyDelete